برمش یکجہتی کمیٹی جرمنی کے زیر اہتمام جرمنی کے دارالحکومت برلن میں ڈنُک کیچ واقعہ کے خلاف مظاہرہ اور آگہی مہم


برمش یکجہتی کمیٹی جرمنی کے زیر اہتمام جرمنی کے دارالحکومت برلن میں ڈنُک کیچ واقعہ کے خلاف مظاہرہ اور آگہی مہم
پمفلٹ تقسیم کیے گئے

مظاہرین نے ہاتھوں میں بینرز اور پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے جن پر بلوچستان میں ڈیتھ اسکواڈ کارندوں کی درندگی کے خلاف نعرہ درج تھے
مظاہرے میں بڑی تعداد خواتین اور بچے شریک تھے
اور جرمنی کے مختلف علاقوں سے بلوچ سیاسی و سماجی کارکنوں نے شرکت کیا
مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ڈنُک واقعہ نے ریاست کے چہرے سے نقاب ہٹا دیا ہے
ریاست نے معاشرے کے انتہائی نالائق لوگوں کو مسلح کرکے بلوچستان پر مسلط کیا ہے
جو دن دیہاٹے اور رات کی تاریکی میں بلوچ چادر و چار دیواری کی تقدس کو پامال کررہے ہیں

مقررین نے کہا کہ ریاست بلوچستان کے بارے میں اپنے پالیسی تبدیل کرے
بلوچستان سے مسلح جھتوں کو فوری طور پر ختم کرے
مقررین نے کہا کہ ریاستی وزرا سانحہ ڈنک پر عوام کو گمراہ کرریے ہیں
واضح رہے کہ اب تک گرفتار مجرموں پر ملک ناز کی قتل کا مقدمہ درج نہیں ہوا ہے
مظاہرے میں جرمن خواتین اور دیگر سوشل ورکر شریک تھے
مظاہرہ سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا کہ آج اس مظاہرے کی توسط سے ہم مہذب دنیا کو بتانا چاہتے ہیں کہ وہ بلوچ نسل کشی پر وہ مذید خاموشی توڑ کر لب کشائی کریں
مقررین نے کہا کہ آج کا مظاہرہ جرمنی میں مقیم بلوچ کمیونٹی کا برمش سے یکجہتی کا پیغام ہے
انہوں نے کہا کہ آج ہم جرمنی سے بلوچستان کو یہ پیغام دے رہے ہیں کہ ہم بلوچستان کے درد اور بہتے آنسو پر خاموش نہیں ہیں.
جبکہ برمش یکجہتی کمیٹی نے جرمنی میں مقیم تمام بلوچ کمیونٹی سے اپیل کیا ہے وہ ہمیشہ اسی طرح متحد ہوکر آواز اٹھائیں












Comments

Popular posts from this blog

میں اسلم کے عہد میں جی رہا ہوں تحریر : مجیدبریگیڈ سلمان حمل