ہم بہت بہادر ہیں ۔۔تحریر پروفیسر غلام دستگیر صابر۔

ہم بہت بہادر ہیں ۔۔تحریر پروفیسر غلام دستگیر صابر۔۔چلیں آج ہماری بہادری اور غیرت کے چند واقعات سنیں۔آپ نے میر چاکر خان رند اور میر گہرام خان لاشاری کا نام سناہوگا۔یہ چار پانچ سو سال پہلے کامختصر واقعہ ہے کہ ایک غیربلوچ گوہر نامی جتنی عورت کی اونٹوں کی خاطر دو نہایت طاقتور بلوچ سرداروں میر چاکر خان رند اور میر گوہرام لاشاری کے درمیان 30 سالہ خوفناک اور خونی لڑائی ہوئی۔اس لڑائی میں بقول مورخین تقریبا30 ہزار بلوچ مفت میں مارے گئے۔ہزاروں ماوں کی گود اجڑ گئے۔ہزاروں بچے یتیم ہوئے۔ہزاروں بہنیں بیوہ ہوگئیں۔بلوچ قوم پارہ پارہ ہوگئی۔وجہ؟؟صرف ایک،،باہوٹ،،عورت گوہر کی چند اونٹوں کے مارے جانے کی وجہ سے۔۔کیونکہ ہم بہت بہادر اور غیرت مند ہیں۔تاریخ دان لکھتے ہیں کہ اس وقت بلوچ قوم کی لشکرکی08ہزار تھی۔جو ایک دوسرے کو چند اونٹوں کی خاطر قتل کررہے تھے۔دوسری جانب مغلوں کی لشکر کی تعدار صرف18ہزار تھی اور انھوں نے ہندوستان پر قبضہ کیا۔ہم 80000 تھے لیکن ایک دوسرے کو کاٹ رہے تھے۔کیونکہ ہم غیرت مند اور بہادر ہیں۔۔آپ قلات کے بلوچ خان حکمرانوں کی تاریخ دیکھیں کہ کس طرح باپ نے بیٹے اور بھائی نے بھائی کو اقتدار کی خاطر قتل کیا۔۔کیونکہ ہم بہادر ہیں۔۔آپ نواب خاران کی تاریخ دیکھیں کہ کس طرح اس نے آزادی کے عظیم مجاہد کو دھوکے سے گرفتار کرکے انگریزوں کے حوالے کیا۔انگریزوں کے خلاف نوشکی کے قریب شہید علی دوست،غازی محمد مراد اور دیگر مجاہدین کوانگریزوں کے ساتھ مل کر کس نے شہید کیا؟ایک کونسلر کے الیکشن کے لئے 1983 میں رند رئیسانی جنگ میں نواب غوث بخش رئیسانی سردار چاکرخان ڈومکی کے دو نوجوان صاحبزادوں سمیت میراسماعیل رئیسانی ور دونوں بلوچ قبائل کے 400 کے قریب ڈاکٹروں استادوں آفیسروں ور بے گناہ غریب لوگوں کو کس نے قتل کیا؟ہم نے۔۔۔وجہ؟؟صرف ایک کونسلر کی سیٹ کے لئے نواب غوث بخش رئیسانی سمیت 400 لوگ قتل۔400 عورتیں بیوہ۔1000 کے قریب بچے یتیم۔۔کیونکہ ہم بہت بہادر ہیں۔۔1983 میں صرف سرداری کی خاطر سردار رسول بخش زہری کو کئی ساتھیوں سمیت کس نے گولیوں سے بھون ڈالا؟؟کیونکہ ہم بہت بہادر ہیں۔1983 ہی میں ممتاز قوم دوست سیاستدان سردار اسد اللہ خان جمالدینی سمیت کئی لوگ عئید کے دن شہید ہوگئے۔۔وجہ؟؟کیونکہ ہم بہت غیرت مند اور بہادر ہیں۔سردار تاج محمد رند کو کس نے قتل کیا؟؟الیکشن کے موقع پر مگسی قبیلے کے 26 لوگ ایک ہی دن میں صرف ایک سیٹ کی خاطر کس نے قتل کروایا؟؟ہم نے۔۔کیونکہ ہم بہادر ہیں۔ممتاز قوم پرست سیاسی و قبائلی رہنما میر عبدالخالق سمیت لانگو قوم کے تقریبا 50 افراد کس نے قتل کیا؟؟ہم نے۔۔ بگٹی قبیلے کے شہید نواب محمد اکبرخان کے بیٹے نوابزادہ سلال بگٹی اور میر حمزہ بگٹی سمیت کلپر اور راہیجہ بگٹی کے سینکڑوں جوانوں کو کس نے خون میں نہلایا؟؟ہم نے۔۔کیونکہ ہم غیرت مند اور بہادر ہیں۔۔دو عظیم قوم دوست و وطن دوست رہنماوں سردار عارف جان محمد حسنی اور اسلم جان گچکی سمیت دونوں قبائل کےکئی لوگوں کو کس نے مارا؟؟ہم نے۔۔کیونکہ ہم غیرت مند اور بہادر ہیں۔۔چند سال پہلے کوئیٹہ میں عید کے دن جتک قبائل کے 26 جوانوں کو کس نے 5 منٹ میں قتل کیا؟؟ہم نے کیونکہ ہم غیرت مند اور بہادر ہیں۔۔چند سال قبل میر زیب لانگو اور لانگو اور لہڑی قبیلے کے کئی خوبرو نوجوانوں کو کس نے مارا؟؟ہم ۔نے۔۔کیونکہ ہم غیرت مند اور بہادر ہیں۔پچھلے کئ سالوں سے کوئیٹہ میں جاری شاہوانی قبیلے کے کئی نوجوانوں کو قبائلی چنگ میں کس نے قتل کیا۔۔؟؟ہم نے۔۔کیونکہ ہم بہت بہادر ہیں۔۔کتنی تاریخیں بیان کروں؟؟کتنی مثالیں دوں؟؟کتنی برادر کشی کے شرمناک واقعات لکھوں؟؟ہم اتنے بہادر اور غیرت مند ہیں کہ،،کٹ کر،،دیکھنے سے بھی بھائی کو قتل کرتے ہیں۔چند گز قبائلی زمین کو،،ماں،،کا درجہ دے کر اس کی خاطر اپنے ہی بھائی کا خون کرتے ہیں۔۔اب تو۔۔۔ہم نے تاریخی بہادری کا،،کمال،،دکھایا۔۔برادر کشی کی وہ شرمناک داستان رقم کی کہ تاریخ ہمیں کبھی معاف نہی کریگی۔۔ہم نے شہید بابو نوروز خان کے خاندان کو بھی نہئ بخشا۔۔ہم نے اپنے ہی قومی ہیرو کے بیٹے نواب امان اللہ خان کو ساتھیوں سمیت شہید کیا۔۔آہ آہ ہم کتنے بہادر ہیں۔۔اور اتنے غیرت مند ہیں کہ 14 سالہ معصوم ہنستا مسکراتامعصوم بچہ نوابزادہ مردان خان کا نازک جسم بھی گولیوں سے چھلنی کردیا؟؟کیا قصور تھا اس معصوم کا؟؟واہ واہ بہت پکے اور اچھے شکاری ہو۔۔اور ظالمو۔۔تمھارا نشانہ کتنا اچھا ہے۔۔کلاشنکوف کی گولی سیدھی معصوم مردان خان کے سر میں لگی۔۔دوسری گولی اس کے سینے سے لگ کر پیٹھ سے نکل گئی۔۔اور چند لمحے قبل اپنے دادا جان کے ساتھ ہنستا کھیلتا معصوم مردان خان کے نازک جسم کو تم نے گولیوں سے سوراخ سوراخ کردیا۔۔اسے خون سے نہلایا۔ہم بلوچ ہیں ہم بہت غیرت مند ہیں۔۔اور ہمارا نشانہ اتنا اچھا ہے کہ اپنے بھائی کے سر اور سینے میں سیدھا گولی مارتے ہیں۔۔۔ویسے دوسری قومیں بہت بے غیرت ہیں۔بزدل ہیں۔ڈرپوک ہیں کہ وہ اپنے بھائیوں کو قتل نہی کرتے۔۔یہ اعزاز صرف ہمیں حاصل ہے۔کیونکہ ہم بہادر ہیں۔ویسے ان بزدل قوموں نے بہت ترقی کی ہے۔باشعور ہو گئے۔اعلی تعلیمیافتہ ہو گئیں۔لیکن ہم اپنی ،،غیرت،،اور ،،بہادری،،کی وجہ سے آج بھی در بہ در زلیل خوار جائل بننے میں ہی فخر کرتے ہیں۔۔ویسے یہ بہادری نہی بلکہ برادرکشی ہے۔بزدلی ہے جہالت ہے۔بے شرمی ہے۔۔لیکن ہم اس کو ماننے کو تیار ہی نہی۔کیونکہ ہم غیرت مند اور بہادر ہیں۔۔اور ایسی بہادری پر لعنت ہو ۔۔کہ اپنے بھائی کو قتل کریں۔اپنی ماوں کا گود اجاڑیں۔اپنی بہنوں کو بیوہ بناییں۔اور اپنے بچوں کو یتیم۔۔

Comments

Popular posts from this blog

میں اسلم کے عہد میں جی رہا ہوں تحریر : مجیدبریگیڈ سلمان حمل