ضلع کیچ کے مختلف علاقوں میں 3روز سے آپریشن جاری،کسی کے زندہ بچنے کی امیدیں کم


کوئٹہ ایران سرحدسے ملحقضلع کیچ کے مختلف علاقوں میں تین روز سے بڑے  پیمانے پر زمینی و فضائی آپریشن جاری ، بکتر بند گاڑیاں ،ٹینک اور گن شپ  ہیلی کاپٹر سمیت جیٹ طیارے آپریشن میں حصہ لے رہی ہیں،علاقے کے موبائل نیٹ  ورک مکمل بند کر دیئے گئے ہیں،بمبارمنٹ سے بڑے پیمانے ہلاکتوں کا خدشہ ظاہر  کیا جارہاہے۔تفصیلات کے مطابق ایران سرحد سے ملحق ضلع کیچ کے مختلف علاقوں  زامران ، سامی شہرک ،ہوشاپ ، بلیدہ ،جالگی سمیت گومازی اور تمپ کے وہ  علاقے جو ایرانی سرحد کے قریب ہیں وہاں تین روز سے بڑے پیمانے پر زمینی و  فضائی آپریشن جاری ہے ۔جس میں گن شپ ہیلی کاپٹر،جیٹ طیارے ،بکتر بند گاڑیاں  سمیت فوجی ٹینک بھی حصہ لے رہے ہیں۔آمدہ اطلاعات مذکورہ تمام علاقے فوج کے  محاصرے میں ہیں داخلی و خارجی راستے مکمل سیل ہیں۔مذکورہ آبادیوں کے مکین  محصور ہیں انکی کسی کقسم کی کوئی اطلاع نہیں ہے ۔آپریشن زدہ علاقوں کے  قریبی آبادیوں کے عینی شائدین کے مطابق یہ آپریشن بڑے پیمانے پر ہورہا ہے  اور خد شہ ہے کہ کوئی بچ جائے ۔ان کے مطابق گن شپ ہیلی کاپٹر اور جیٹ طیارے  مسلسل بمبارمنٹ کر رہے ۔بموں کی خوفناک آواز سے تمام علاقے گونج رہے ہیں  اور خوف کا عالم ہے ، فضا ئیں دوئیں بھر گئی ہیں۔واضع رہے کہ ایران بارڈر  سے ملحق ضلع کیچ کے یہ علاقے سی پیک روٹ پر واقع ہیں اور پاکستانی فورسز  گذشتہ آٹھ مہینوں سے سی پیک روٹ پر واقع تمام علاقوں میں آپریشن کرکے لوگوں  کو اپنے گھر بار اور جدی پشتی اراضیات سے بیدخل کر رہی ہیں۔اب تک لاکھوں  کی تعداد میں لوگ نقل مکانی کر چکے ہیں ۔ اطلاعات ہیں کہ مذکورہ آپریشن  براہ راست پاکستان آرمی کی جانب سے کی جارہی ہے اور اسے ایرانی سیکورٹی  فورسزو خفیہ اداروں کی مدد وکمک بھی حاصل ہے کیونکہ اگر بارڈایریا میں  ایرانی حکومت کے بغیر یہ آپریشن ممکن نہیں ہے ۔

Comments

Popular posts from this blog

میں اسلم کے عہد میں جی رہا ہوں تحریر : مجیدبریگیڈ سلمان حمل