دشت و بالیچہ میں فوجی بربریت جاری ، 9افراد حراست بعد لاپتہ

تربت مکران میں پاکستانی فوجی آپریشن اپنی شدت کے ساتھ جاری ، 9 افراد  حراست بعد لاپتہ، کئی گھروں کو نذر آتش کرنے کے بعد انکی قیمتی سامان و  لوگوں کی املاک و گاڑیوں کو لوٹ کر لے جایا گیا ۔تفصیلات کے مطابق آج بروز  جمعہ علی الصبح پاکستانی فوج نے ضلع کیچ کے علاقوں دشت کے دو قصبوں گوہرگ  ہسین قصبے اور شملی کپکپاراور تمپ بالیچہ میں آپریشن کرکے 9 افراد حراست  بعد لاپتہ کئے ۔گھر گھر تلاشی دوران چادرو چاردیواری کی تقدس پائمال کر کے  خواتین و بچوں کو شدیدتشدد کا نشانہ بنایا گیاجبکہ گھر وں میں موجود قیمتی  سامان کو لوٹ لیا گیا۔اور لوگوں کے املاک گاڑیوں لوٹ کر اپنے ساتھ لے گئے۔  دشت کے علاقے گوہرگ ہسین قصبے اور شملی کپکپارمیں آپریشن دوران 8افراد کو  حراست میں لیکر نامعلوم مقام پر منتقل کردیا۔جن کی شناخت نصیر شکاری رحیم  بخش، سالم سفر ، طارق سفر ، مجیب جمیل ، زاہد رحمت مندوک،سفر جیئند،حفیظ  فیض محمداور رفیق فیض محمد کے ناموں سے کی گئی جبکہ تمپ بالیچہ سے لاپتہ  کئے گئے شخص کی شناخت نہ ہوسکی ۔واضع رہے کہ ضلع کیچ کے علاقے دشت میں  گذشتہ ایک مہینے سے تسلسل کے ساتھ آپریشن جاری ہے اب تک کی معلومات کے  مطابق 100سے زائد افراد کو حراست میں لیکر لاپتہ کیا گیا جبکہ ان میں محض  چند کو رہا کیا گیا باقی سب تاحال لاپتہ ہیں ۔دشت ضلع گوادر سے ملحق علاقہ  ہے اور سی پیک روٹ کا اہم حصہ ہے ۔پورے نومبر کے مہینے سے جاری آپریشن سے  اب تک ہزاروں کی تعداد میں لوگوں نے نقل مکانی ہے اور پاکستانی فوج و حکومت  بھی مسلسل آپریشن اور لوگوں کو تنگ کرکے دشت کے تمام آبادیوں نقل مکانی پر  مجبور کر رہی ہے تاکہ سی پیک روٹ محفوظ بنایا جاسکے ۔

Comments

Popular posts from this blog

میں اسلم کے عہد میں جی رہا ہوں تحریر : مجیدبریگیڈ سلمان حمل