دشت میں فوجی آپریشن 35ویں روز سے جاری ،مزید5افراد حراست بعد لاپتہ

کیچ دشت میں پاکستانی فوج کا آپریشن 35روز میں داخل، کپکپار ،  گوہرگ حسین بازار ،کمبیل ،بل کراس میں فوج کا آبادیوں پر حملہ ،5افراد  حراست بعد لاپتہ ، ڈسپنسری میں توڑپھوڑ بعد ادویات کو لوٹ لیا گیا۔تفصیلات  کے مطابق آ ج بروز پیر کو پاکستانی فوج نے ضلع کیچ کے علاقے دشت کے مختلف  قصبوں کپکپار، گوہرگ حسین بازار ،بل کراس اور کمبیل میں حملہ کرکے چادرو  چاردیواری کی تقدس کو پامال کرتے ہوئے خواتین وبچوں کو شدید تشدد کا نشانہ  بنایا اور گھروں میں توڑ پھوڑ کرکے قیمتی اشیا لوٹ لئے جبکہ5فراد کو حراست  میں لیکر نامعلوم مقام پر منتقل کردیا۔ فوج نے کپکپار پھل کلات میں یاصف  سفر ،مرادخان سفر اور جاوید سفر نامی بھائیوں جبکہ کمبیل سے بابو سید اور  گوہرگ حسین بازار سے جمیل شکاری رحیم نامی 5افراد کو حراست میں لیکر  نامعلوم مقام پر منتقل کردیا۔واضع رہے کہ جمیل شکاری رحیم بخش کے دو  بھائیوں نصیر اور خلیل کو 2نومبر کو حراست میں لیکر لاپتہ کیاگیاتھا اسی  طرح بابو سید نامی شخص کے بیٹے کو فوج اور خفیہ اداروں کے لوگوں نے چار ماہ  قبل گوادر سے حراست میں لیکر لاپتہ کیاتھا جو تاحال لاپتہ ہیں۔فوج نے  کمبیل میں علاقے کے واحد علاج معالجے کی کی ڈسپنسری پر حملہ کرکے دروازے و  کھڑکیاں توڑ دیں او ر اوپی ڈی رجسٹرڈ سمیت ادویات کو لوٹ کر لے گیا۔واضع  رہے کہ ضلع کیچ کا علاقہ دشت سی پیک روٹ اہم حصہ ہے اورضلع گوادر سے ملحق  علاقہ ہے یہاں گذشتہ35دنوں سے طویل ترین فوجی آپریشن جاری ہے ۔اب تک موصولہ  اعداد وشمار کے مطابق فوج نے53کارروائیوں میں136فرادکو حراست میں لیکر  لاپتہ کیا جو ہنوز لاپتہ ہیں۔

Comments

Popular posts from this blog

میں اسلم کے عہد میں جی رہا ہوں تحریر : مجیدبریگیڈ سلمان حمل