نیشنل  پارٹی بعد ،بی این پی مینگل نے بلوچ نسل کشی کے لیے ڈیتھ اسکواڈقائم کیے  ،ڈاکٹر اللہ نذر


کوئٹہ بلوچ قوم پرست رہنماء ڈاکٹر اللہ نذر بلوچ نے اپنے بیان میں  کہا ہے کہ پاکستان میں وفاقی سیاست کرنے والوں کو بلوچستان میں بلوچ قومی  آزادی کی جد و جہد کیخلاف استعمال کیا جا رہا ہے۔ پہلے نیشنل پارٹی کے  رہنماوں نے بلوچستان میں ڈیتھ اسکواڈ قائم کرکے بلوچ نسل کشی میں قابض فوج  کا ساتھ دیا۔ اب بلوچستان کے دیگر دو اضلاع میں بلوچستان نیشنل پارٹی مینگل  (بی این پی مینگل) نے دو ڈیتھ اسکواڈ قائم کئے ہیں۔ قلات کے علاقے دشت  گوران میں قمبر خان اور ضلع آواران کے جھاو میں مولا بخش محمد حسنی کی  سربراہی میں دو ڈیتھ اسکواڈ کیمپ قائم کئے گئے ہیں۔ دونوں اشخاص اپنے آپ کو  باقاعدہ طور پر بی این پی مینگل کا رکن کہتے ہیں۔ اب یہ واضح ہوگیا کہ  تمام بلوچ غدار، وفاق پرست جماعتیں، جو اپنے آپ کو قوم پرست کہتے ہیں، ایک  ہی چھتری تلے متحد ہو گئے ہیں۔ بلوچ قوم کے نام پر وہ بلوچ قوم کا خون چوس  رہے ہیں اور شہدا کے خون کا سودا لگا رہے ہیں۔ میں بلوچ قوم سے اپیل کرتا  ہوں وہ اِن سے دور رہیں جو بنگال کے قاسم و جعفر بن گئے ہیں۔ بلوچ قوم ان  کے جلسے جلوسوں میں شرکت نہ کریں کیونکہ وہ آنے والے انتخابات کی تیاری کر  رہے ہیں۔ بلوچ قوم ان انتخابات کو گزشتہ انتخابات کی طرح مسترد کرے گی۔ اس  پارلیمنٹ و انتخابات نے بلوچوں کو صعوبتوں اور لاشوں کے سوا کچھ نہیں دیا  ہے۔ ماضی میں یہ وفاق پرست جماعتیں صرف پارلیمنٹ میں بلوچ نسل کشی کی  منظوری دیا کرتی تھیں، اب باقاعدہ ڈیتھ اسکواڈز تشکیل دیکر پاکستانی فورسز  کے ساتھ بلوچوں کے قتل عام میں مصروف ہیں۔ بلوچ قوم ان چوروں کا احتساب کرے  گی۔

Comments

Popular posts from this blog

میں اسلم کے عہد میں جی رہا ہوں تحریر : مجیدبریگیڈ سلمان حمل