Posts

Showing posts from November, 2016

تلی میں 5افراد کو حراست بعد مارے جانیکا دعویٰ عالمی رائے عامہ کو گمراہ کرنیکی کوشش ہے ،بی ین ایم

Image
کوئٹہ بلوچ نیشنل موومنٹ کے مرکزی ترجمان نے کہا کہ سبی ،  کوہلو، ڈیرہ  بگٹی، نوشکی، خاران، قلات، بولان، دشت اور کلانچ سمیت  بلوچستان کے کئی  علاقوں میں فوجی آپریشن اور زیر حراست بلوچوں کا قتل  عام جاری ہے۔ چار دنوں  سے سبی کے علاقے تلی و گرد ونواح میں فوجی آپریشن  میں کئی نہتے بلوچوں کو  اغوا کرکے لاپتہ کیا گیا ہے، اور کئی گھر جلائے  گئے ہیں۔چھبیس نومبر کو تلی  سے اغوا ہونے والوں میں سے فیضان مری ولد قادر  خان، حمل خان مری ولد قادر  خان، بخت علی مری ولد شیر علی اور دولو مری کو  دوران حراست قتل کرکے کل اُن  کی لاشیں پھینکی گئیں اور مقابلے میں مارے  جانے کا دعویٰ کیا گیا، جو  سراسر جھوٹ اور عالمی رائے عامہ کو گمراہ کرنے  کی کوشش ہے۔ یہ علاقے ابھی  تک محاصرے اور تشدد کی زد میں ہیں۔ قلات ،  خاران ، مستونگ، اور منگچر کے  گرد ونواح میں پاکستانی ایئر فورس کے جنگی  ہیلی کاپٹرز اور زمینی فوج مسلسل  کارروائیوں میں مصروف ہیں، جہاں لوگوں کو  اغوا اور قتل کئے جانے کی خدشات  ہیں۔ ترجمان نے کہا کہ یکم نومبر کو کیچ  کے علاقے دشت میں فوجی آپریشن کی  نئی لہر آج ایک مہینے کے بعد بھی جاری  ہ…

چین پاکستان اکنامک کوریڈور پر قائم اہم پُل کو دھماکے سے تباہ کرنے کی ذمہ داری قبول کرتے ہیں،بی ایل ایف

Image
کوئٹہ  بلوچستان لبریشن فرنٹ کے ترجمان گہرام بلوچ نے نامعلوم مقام سے  سیٹلائٹ فون کے ذریعے کہا کہ بدھ کے روز ضلع کیچ کے علاقے دشت سنگئی میں  چین پاکستان اکنامک کوریڈور (سی پیک) پر قائم پُل کو دھماکہ خیر مواد سے  اُڑا کر تباہ کر دیا۔ اسی دوران پل پر سے جاتی ہوئی ایک ڈمپر گاڑی بھی  دھماکہ کی زد میں آکر ناکارہ ہوا ہے۔ یہ گاڑی عسکری تعمیراتی کمپنی ایف  ڈبلیو او کی تھی۔ یہ پُل قابض پاکستان کی چین کے ساتھ نام نہاد ترقی اور  چین پاکستان اکنامک کوریڈور (سی پیک ) کا حصہ ہے۔ بلوچ قوم کی مرضی و منشا  کے بغیر کوئی منصوبہ قابل قبول نہیں اور اِن پر حملے جاری رہیں گے۔ اِن  منصوبوں کے سامنے رکاوٹ بلوچ قوم پر پاکستانی فوج روزانہ کی بنیاد  پرآپریشنوں میں مصروف ہے۔ ایک مہینے سے جاری کیچ کے علاقے دشت میں فوجی  آپریشن میں ایک سو سے زائد نہتے بلوچوں کو لاپتہ کیا گیا ہے۔ اِن آپریشنوں  کا مقصد بلوچ قوم کو نقل مکانی پر مجبور کر نا ہے، تاکہ پاکستان آسانی سے  اپنی استحصالی منصوبوں کو پایہ تکمیل تک پہنچائے۔ فوجی آپریشن و بمباری سے  پہلے ہی کئی ہزار گھرانے بے گھر ہوکر بلوچستان کے مختلف حصوں میں در بد…

گوادر سے ملحق دشت میں فوجی آپریشن سے100سے زائد افراد لاپتہ کئے گئے،بی ایس او آزاد

Image
کوئٹہ بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن آزاد کے مرکزی ترجمان نے بلوچستان کے مختلف  علاقوں میں جاری فوجی کاروائیوں پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ بلوچستان  میں عوام کے خلاف فورسز کی کاروائیاں شدت کے ساتھ جاری ہیں۔ ڈیرہ بگٹی کے  مختلف علاقوں میں گزشتہ کئی دنوں سے زمینی و فضائی آپریشن کے ذریعے متعدد  دیہاتوں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔ ان کاروائیوں کے دوران متعدد افراد گرفتار  بھی کرلئے گئے ہیں۔ اس کے لئے گزشتہ روز سبی کے مختلف علاقوں میں فورسز نے  آپریشن کے دوران پانچ نہتے افراد کوفائرنگ کا نشانہ بنا کر قتل کردیا، اور  نصف درجن لوگوں کو اٹھا کر اپنے ساتھ لے گئے۔ فورسز نہتے لوگوں کو قتل کرکے  انہیں مذاحمت کار قرار دینے کا جھوٹا دعویٰ کررہے ہیں۔ ترجمان نے کہا کہ  ایک مہینے سے جاری آپریشنوں کے دوران گوادر سے ملحقہ علاقہ دشت میں اب تک  ایک سو کے قریب عام لوگ اٹھا کر لاپتہ کیے جا چکے ہیں، جبکہ درجنوں دیہات  لوٹ مار کے بعد نظر آتش کیے جا چکے ہیں۔ چائنا کی سرمایہ کاری کو بلوچستان  میں محفوظ بنانے کے لئے بلوچ عوام کے خلاف فورسز کی جابرانہ کاروائیاں ایک  عرصے سے جاری ہیں، ان کاروائیوں میں روز بہ…

مغربی بلوچستان میں پاکستانی پراکسی وار پر خدشات کا اظہار حمایت نہیں،بلوچ رہنما اختر ندیم

Image
کوئٹہ بلوچ آزادی پسند رہنما شے اختر ندیم بلوچ نے اپنے جاری کردہ تازہ  ٹوئیٹ میں کہا ہے کہ مغربی بلوچستان کی صورت حال کے بارے میں ہمارے خدشات  کا مطلب یہ نہیں کہ ہر جھوٹے بیان کو تسلیم کریں اور وہاں پاکستانی پراکسیز  کی حمایت کریں۔واضح رہے کہ ایک کاغذی تنظیم کی جانب سے گزشتہ روز ایک بیان  سامنے آنے کے بعد آزادی پسند رہنماکی جانب سے بروز بدھ مذکورہ ٹوئیٹ سامنے  آیا۔جبکہ 26 نومبر کو انہوں نے ایک اور ٹوئیٹ میں ثنا اللہ زہری کے ایک  بیان کے جواب میں کہاہے کہ کٹھ پتلی وزیر اعلیٰ ثنااللہ زہری پچانوے فیصد  بلوچ آزادی پسند جنگجوؤں کو ختم کرنے کا دعویٰ کرتا ہے مگر وہ خود  دارالحکومت کوئٹہ شہر میں سیر کیلئے نہیں نکل سکتے۔اسکے علاوہ دشت میں جاری  آپریشن اور سی پیک حوالے اپنے دو دیگر ٹوئیٹ میں اختر ندیم بلوچ نے کہاہے  کہ فوجی آپریشنوں کے نتیجے میں بلوچستان میں ہزاروں مقامی لوگ در بدر ہوئے  ہیں۔ وہاں ایک بڑا انسانی بحران ہے۔ دشت آپریشن اور گوک اسکول مند بلوچستان  سے اساتذہ کا اغوا بلوچوں کو سی پیک کے راستے سے ہجرت پر مجبور کرنا ہے۔

پنجگور و ڈیرہ مراد جمالی میں تین افراد حراست بعد لاپتہ

Image
کوئٹہ پنجگور اور ڈیرہ مرادجمالی میں پاکستانی فوج نے آپریشن کرکے تین  افراد کوحراست میں لیکر لاپتہ کردیا۔تفصیلات کے مطابق پاکستانی فوج نے منگل  کو پنجگور اور ڈیرہ مراد جمالی میں آپریشن کر کے 3افراد کو حراست میں لیکر  نامعلوم مقام پر منتقل کردیا۔تینوں افراد کی شناخت نہ ہوسکی ۔خدشہ ہے کہ  انہیں شدید تشدد کے بعد دہشتگرد ظاہر کرکے ان کی مسخ لاشیں ویرانوں میں  پھینک دی جائینگی جو پاکستانی فوج کا حسب روایت ہے

نوشکی ، قلات،خاران ،مستونگ ،منگچر میں زمینی و فضائی آپریشن جاری

Image
کوئٹہ نوشکی ،قلات،خاران ،مستونگ ،منگچر میں پاکستانی فوج کا زمینی و فضائی  آپریشن تین دنوں سے جاری ،علاقوں میں خوف و ہراس،متعدد افراد کی ہلاکت و  گمشدگی کا خدشہ۔تفصیلات کے مطابق نوشکی ،قلات ، خاران ، مستونگ اور منگچر  کے پہاڑی علاقوں میں گذشتہ تین دنوں سے پاکستانی آرمی کی زمینی و فضائی  آپریشن جاری ہے ۔جیٹ جہاز اور گن شپ ہیلی کاپٹروں کی پروازوں سے گردو نواح  کی آبادیاں خوف و ہراس کا شکار ہیں۔تین دنوں سے جاری اس فوجی آپریشن میں  متعددا فراد کی ہلاکت و گمشدگی کا خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے لیکن مواصلاتی  نظام کی بندش کی وجہ سے اصل حقائق تک رسائی ممکن نہیں ہو پا رہا ہے ۔جبکہ  گذشتہ دنوں سبی تلی کے ایریا میں پاکستانی فوج نے 5افراد کی ہلاکت و کئی کی  گرفتاری کا دعویٰ کیاتھا لیکن ان کے نام حسب معمول میڈیا کو جاری نہیں کئے  جو اس بات کی ثبوت ہے کہ مذکورہ گرفتار افراد کو دہشتگرد ظاہر کرکے ان کی  مسخ لاشیں پھینک دی جائیں گی ۔

کیوبا میں ہزاروں افراد کا فیڈل کاسترو کو خراج عقیدت پیش

Image
ہوانا کیوبا کے دارالحکومت ہوانا میں ریوولوشن سکوئر میں ہزاروں کی تعداد  میں افراد انقلابی رہنما فیدل کاسترو کو خراج عقیدت پیش کر رہے ہیں۔تقریب  کا آغاز قومی ترانے سے ہوا اور اس کے بعد مقررین نے اظہارخیال کیا۔کیوبا کے  صدر واؤل کاسترو نے اپنے بھائی فیدل کاسترو کو 'عاجز لوگوں کے لیے، عاجز  لوگوں کے انقلاب کے رہنما' کے طور پر بیان کیا۔خیال رہے کہ فیدل کاسترو سنہ  1959 میں برسراقتدار آئے تھے اور گذشتہ جمعے 90 برس کی عمر میں ان کا  انتقال ہوگیا تھا۔اس تقریب میں لاطینی امریکہ کے بائیں بازو کے رہنما شامل  تھے تاہم دیگر ممالک نے اپنے نچلے عہدوں کے سفارتی نمائندے بھیجے ہیں۔کیوبا  میں یک جماعتی نظام ہے اور فیدل کاسترو تقریبا نصف صدی تک کیوبا میں  برسراقتدار رہے تاہم ان کے بارے میں آرا منقسم رہی ہیں۔فیدل کاسترو کے  مداحین ان کی صحت، تعلیم اور دیگر سماجی اقدامات کی تعریف کرتے ہیں تاہم ان  کے مخالفین ان پر حزب اختلاف کو سختی سے کچلنے کا الزام لگاتے ہیں۔ہوانا  کے ریوولوشن سکوئر وہی جگہ ہے جہاں کیوبن عوام فیدل کاسترو کی شعلہ فشاں  تقاریر سننے کے لیے جمع ہوتے تھے۔اسی جگہ میں جمع …

4 abducted Baloch civilians killed in cold blooded during Talli Sibi Operation In Balochistan

Image
#ExtremelyGraphics
#BolanMassare 4 abducted Baloch civilians killed in cold blooded during Talli offensives
Na-Pak army resumed a massive offensives suburbs of Sibi in Talli areas since Saturday.
The army abducted dozens of Baloch civilians, later killed them in custody, their mutilated dead bodies are recovered two days later.
Name of the martyrs are
1: Faizan Marri S/O Qadir Khan
2: Hammal Khan Marri S/O Qadir Khan
3: Bakht Ali Marri S/O Sher Ali
4: Dowlo Marri
Offensives and indiscriminate bombing, shelling on Baloch civilians is entered in 3rd consecutive days.
4 کی شناخت فیضان ولد قادر خان ،حمل خان ولد قادر خان ،بخت علی ولد شیر علی ،ڈولو ولد نامعلوم کے ناموں سے ہوئی ہے شہید ہونے والے بلوچ فرزندوں کا تعلق مری قبیلے سے بتا یا جاتا ہے فوجی جارحیت جاری ہے۔








How Pakistan Army abducting and Killing baloch People In Balochistan

Image

New Documentary on Balochistan Pakistan's hidden war: A tribal conflict finned by U.S. funds

Image

article about Balochistan on a swedish newspaper with english translation

Image
Tjena, jag fick en artikel publicerad gällande situationen med mitt folk i Iran och Pakistan, och utrotningen som sker. De persiska och pakistanska säkerhetsstyrkorna mördar, kidnappar, torterar och våldtar Balocher på en daglig basis, upp till 20 000 har kidnappats dom senaste åren varav majoriteten hittas döda ute i öken, många är folk som har protesterat för ett demokratiskt och självständigt Balochistan. Trots detta har situationen inte uppmärksammats av varken EU eller den svenska regeringen,.Detta är första gången som svensk media har uppmärksammat Balochistan och kan bli en av många viktiga småsteg till att folk i den moderna världen blir medvetna av vad som sker. Dela gärna artikeln och kommentera, hjälp till att göra artikeln uppmärksammad så att fler kan veta vad händer, så att utrotningen av mitt folk eventuellt kan stoppas.
English translation
Hey, I got an article published in the current situation with my people in Iran and Pakistan, and eradication is happe…

کچھ یادیں انمول لوگوں کے ساتھ

Image
حمل بلوچکچھ چیزوں پر انسان سوچتا ہے مگر یقین ایک فیصد بھی نہیں ہوتا ھے کچھ چیزوں کو انسان دیکھتا ھے اپنے انکھوں سے مگر مستقبل میں کیا ہوگا جو کہ ہر حال میں ہونا ھے پھر بھی دل نہیں مانتا … ہنستے مسکراتے سنجیدے علم و شعور سے لیس ایسے نوجوان چہرے جنہیں انسان دیکھے تو دیکھتے ہی رہ جائے روز ہنسنا مسکرانا اپنے کاموں میں مگن دشمن کو ضرب لگانے کا جزبہ مزاق بلند چوٹیوں پر گشت لگانا گھاٹ دینا کیمپ کے مال مویشیوں کا دیکھ بھال مہمانوں کی خاطر داری کس کس چیز کا ذکر کروں ایسے لوگ کیسے بچھڑ سکتے ہیں؟ ؟؟ دماغ کو کئی بار زور دیتا ہوں جنگ ھے دشمن ھے مار سکتا ھے دوست بھی ایسے کہ پیچھے ہٹنے والے بھی نہیں پھر بھی کھبی کھبار ان کی یادیں کچھ زیادہ تنگ کرتے ہیں تو دل کو تسلی دیتا ہوں کہ دوستوں کی کوئی پالیسی ہوگی سب سلامت ہیں (خدا کرے ایسا ہی ہو) ..
وہ دن کاش زندگی میں نہیں آتا جب کسی دوست نے بتایا کہ امیر الملک جمال جان سات اپریل کے آپریشن میں شہید ہوا ھے پتہ نہیں مجھ میں عجیب کیفیت طاری ہو گیا وہ نوجوان گھنے بال خوبصورت مسکان گول اور پُر کشش آنکھیں پُر مہر آواز میری نظروں کے سامنے کھڑا ہو گیا …

New Video Gunship helicopter spotted flying around areas of Dera Bugti where army is carrying out deadly military operation against civil populace

Image

تلی میں فورسز نے 4سمیت 8افراد لاپتہ کئے،جھڑپ میں بھاری نقصان پہنچایا،بی ایل اے

Image
کوئٹہ بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان جئیند بلوچ نے نامعلوم مقام سے سیٹلائٹ  فون کے زریعے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ سبی میں تلی کے مختلف  علاقوں میں پاکستانی زمینی فوج نے پاکستان فضائیہ کی مدد سے پیش قدمی کرتے  ہوئے آج صبح فوجی جارحیت شروع کرکے تلی کے علاقے کلگری ، چھرڑی اور مولے لڑ  کے تمام گھروں اور جھونپڑیوں سے قیمتی اشیاء لوٹ کر انہیں جلادیا جبکہ  وہاں سے توکلی مری، شکاری مری، جعفر مری اور حمل مری سمیت چار بچوں کو  اغواء کرکے لے گئے اسکے علاوہ تلی میں بلوچ سرمچاروں اور پاکستانی فورسز کے  ساتھ شدید نوعیت کی جھڑپیں ہوئیں جس میں فورسز کو بھاری جانی نقصان اٹھانا  پڑا۔ ترجمان نے کہا کہ بلوچ آزاد ریاست کے حصول تک مزاحمت جاری رہے گی۔

کیچ دشت طویل ترین فوجی آپریشن جاری،سینکڑوں لاپتہ 80 کی شناخت ہو گئی

Image
تربت  دشت کیچ میں پاکستانی فوج کا طویل ترین آپریشن جاری،کئی گھر  نذر آتش،متعددا فراد ہلاک،سینکڑوں حراست بعد لاپتہ ،80کی شناخت  ہوگئی۔تفصیلات کے مطابق ضلع کیچ کے علاقے دشت میں نومبر کے پہلے ہفتے میں  پاکستانی فوج کی جانب سے ایک طویل ترین آپریشن کا آغاز کیا گیا۔جس سے اب تک  موصول اعداود و شمار کے مطابق سینکڑوں افراد کو حراست بعد لاپتہ کیا گیا  جن میں 80کی شناخت ہوگئی۔ضلع گوادر سے ملحق علاقہ دشت جو چائنا پاکستان  اقتصادی راہداری کا اہم روٹ ہے پاکستانی فوج نے حسب روایت سی پیک روٹ پر  پڑنے والے تمام آبادیوں کو فوجی آپریشن وبربریت کا نشانہ بنا کرانہیں نقل  مکانی سے مجبور کیا ہے۔ضلع کیچ کے علاقے دشت کے گردونواح اور مضافاتی  علاقوں میں نومبر کے پہلے ہفتے میں ایک طویل ترین فوجی آپریشن کا آغاز کیا  جو ہنوز جاری ہے ۔سنگر کو موصولہ اعداد وشمار کے مطابق اب تک سینکڑوں لوگوں  کو حراست بعد لاپتہ کیا گیا جبکہ کئی لاشیں بر آمد کی گئیں جنکو فوج نے  حراست بعد لاپتہ کیا اور شدید تشدد کا نشانہ بناکر قتل کردیاتھا۔پاکستانی  فوج کی آپریشن کے نام پر جاری اس بربریت میں سینکڑوں گھروں کو جلایا گیا  …

تلی کے قریبی علاقوں میں بڑے پیمانے پر آپریشن جاری ہے، ہلاکتوں کی اطلاعات ہیں ، یونائیٹڈ بلوچ آرمی

Image
کوئٹہ بلوچ یونائیٹڈآرمی کے ترجمان مزار بلوچ نے کہا ہے کہ سبی کے مشرق میں  تلی کے قریب فورسز نے ایک بڑے پیمانے پر آپریشن شروع کردیا ہے اور درجنوں  کی تعداد میں خواتین ،بچوں اور نوجوانوں کو گرفتار کرکے سبی منتقل کیا  جارہا ہے۔ یہ بات انہوں نے نامعلوم مقام سے سیٹلائٹ فون پر بتائی۔ ترجمان  نے کہا کہ منگل کی صبح سبی کے مشرق میں تلی کے قریبی علاقوں میں ایک درجن  کے قریب ہیلی کاپٹروں اور زمینی فورسز نے علاقے میں بڑے پیمانے پر آپریشن  شروع کیا جس کے دوران ہلاکتوں کی بھی اطلاعات آرہی ہیں فورسز نے بڑے پیمانے  پر خواتین ،بچوں اور بوڑھوں کو گرفتار کرکے گاڑیوں کے ذریعے سبی منتقل  کردیا گیا اورفورسز کی فائرنگ اور ہیلی کاپٹروں کی بمباری سے بڑے پیمانے پر  مکانات اور جھونپڑیاں تباہ ہوگئی ہیں اور فورسز مال مویشی بھی گاڑیوں میں  ڈال کراپنے ہمراہ لے گئے ہیں۔

کوئٹہ میں فوررسزکا مشترکہ آپریشن 3 افرادحراست بعد لاپتہ

Image
کوئٹہ ایف سی ،پولیس او ر حسا س ادارے نے کوئٹہ میں مشترکہ آپریشن  کرکے3 افراد کوحراست بعد لاپتہ کردیا۔میڈیا ذرائع کے مطابق ہفتے کی شب ایف  سی ،پولیس اور حساس ادارے نے کوئٹہ کے علاقے ڈاکٹر بانو روڈ اور مسجد روڈ  پر مشترکہ کاروائی کر کے عابد،دیداراور عبدالمالک نامی تین افرادکو گرفتار  کرکے نا معلوم مقام پر منتقل کر دیا گیا۔

لہڑی میں بارودی سرنگ دھماکا،تعمیراتی کمپنی کی ٹریکٹر تباہ

Image
سبی  لہڑی کے قریب سنگسیلہ ٹو ڈیرہ بگٹی روڈ پر بارودی سرنگ کا دھماکہ  تعمیراتی کام کرنے والا ڈوزر تباہ تفصیلات کے مطابق لہڑی کے قریب سنگسیلہ  ٹو ڈیرہ بگٹی روڈ کی تعمیر کرنے والا ڈوزر ٹریکٹر نامعلوم افراد کی جانب سے  زیر زمین نصب بارودی سرنگ سے ٹکر گیا جس کی نتیجے میں زوردار دھماکہ کی  آواز دور دور تک سنی گئی۔ دھماکہ کے باعث ڈوزر مکمل طور پر تباہ ہوگیا جبکہ  ڈرائیور محفوظ رہا واقعہ کے بعد علاقہ کو سیکورٹی فورسز نے گھیرے میں لے  لیا ۔

بی ایل ایف نے گوادر میں چینی تیل کمپنی پر حملے کی ذمہ داری قبول کرلی

Image
کوئٹہ  بلوچستان لبریشن فرنٹ کے ترجمان گہرام بلوچ نے گوادر حملے کی ذمہ  داری قبول کرتے ہوئے کہا کہ گوادر کے علاقے کلانچ میں ڈنڈو کے مقام پر چینی  کمپنی، چائنا پٹرولیم لوگنگ (سی پی ایل ) پر حملہ کرکے دو سیکورٹی  اہلکاروں کو ہلاک کیا۔ ان سے دو بندوق اور گاڑی بھی قبضے میں لے لی گئی  جبکہ گاڑی ڈرائیور کو غیر مسلح ہونے کی وجہ سے چھوڑ دیا گیا۔ یہ کمپنی  گوادر، پسنی و گرد ونواح میں تیل و گیس کی تلاش میں مصروف ہے۔ جو قابض  پاکستان کی چین کے ساتھ نام نہاد ترقی اور چین پاکستان اکنامک کوریڈور (سی  پیک ) کا حصہ ہیں۔ بلوچ قوم کی مرضی و منشا کے بغیر کوئی منصوبہ قابل قبول  نہیں اور اِن پر حملے جاری رہیں گے۔ اس منصوبے کے تحت بلوچ وسائل کی لوٹ  مار کے ساتھ یہاں لاکھوں غیر ملکیوں کو آباد کرنے اور بلوچ قوم کو اپنی ہی  سرزمین پر اقلیت میں تبدیل کرنے کی سازشیں ہو رہی ہیں۔ اِن منصوبوں کے  سامنے رکاوٹ بلوچ قوم پر پاکستانی فوج روزانہ کی بنیاد پر آتش و آہن برسا  رہا ہے۔ ایک مہینے سے جاری کیچ کے علاقے دشت میں فوجی آپریشن میں ایک سو سے  زائد نہتے بلوچوں کو لاپتہ کیا گیا ہے۔ اِن آپریشنوں کا مقصد بلو…

مستونگ :پاکستانی فورسز کی فائرنگ ، 2افراد جاں بحق ، ایک حراست بعد لاپتہ

Image
کوئٹہ   بلوچستان کے علاقے مستونگ میں پاکستانی فورسز نے آپریشن کے  نام پر دو افراد کو قتل جبکہ ایک کو حراست بعد لاپتہ کردیا۔ میڈیا رپورٹ کے  مطابق مستونگ کے علاقے میں پاکستانی فورسز نے آپریشن کرکے دو افراد کو قتل  جبکہ ایک کو حراست بعد لاپتہ کردیاہے۔واضع رہے کہ فورسز ترجمان نے حسب  روایت نام میڈیا کو جاری نہیں کئے جنہیں دوسرے لاپتہ افرادکی طرح ٹارچر سیل  میں غیر انسانی تشدد کا نشانہ بناکر ان کی ڈیتھ باڈیزویرانوں میں پھینک  دیا جاتا ہے ۔

گوادر :کلانچ میں گیس تلاش کرنیوالی کمپنی پر حملہ،2اہلکار ہلاک

Image
گوادر ضلع گوادرکے علاقے کلانچ ڈنڈو میں مسلح افراد کا گیس و تیل تلاش  کرنے والی کمپنی سی پی ایل پروجیکٹ کے سیکورٹی گارڈ پر حملہ، 2اہلکار  ہلاک،اسلحہ بھی چھین کر لے گئے۔ذرائع کے مطابق ضلع گوادرکے تحصیل پسنی کے  علاقے کلانچ ڈنڈو کے مقام پر آج بروز ہفتہ علی الصبح تیل و گیس تلاش کرنے  والی کمپنی سی پی ایل پروجیکٹ کے سیکورٹی کیلئے تعینات گارڈ پر حملہ کیا جس  سے دو سیکورٹی گارڈ ہلاک ہوگئے جبکہ مسلح افراد نے ان کے اسلحہ سمیت انکی  گاڑی بھی چھین کر اپنے ساتھ لے گئے

چار سالوں سے لاپتہ امان اللہ زہری کی بازیابی کی اپیل

Image
حب  بلوچستان میں لاپتہ افراد معاملہ ایک سنگین صورت اختیار کرچکا  ہے ۔کوئی دن بھی ایسا نہیں جاتا کہ ریاستی ایجنسیز اور ان کے گماشتے کسی  نہ کسی بلوچ فرزند کو حراست میں لیکر لاپتہ نہیں کرتے ۔انجیرہ سوراب کے  رہائشی امان اللہ زہری ولد در محمد زہری کو 26 اگست 2013 کو بلوچستان کے  نام نہاد وزیر اعلیٰ اور نام نہاد سردار سردار ثناء اللہ زہری کے کارندوں  نے سرکاری ایجنسیوں کے ساتھ ملکر حب چوکی بلوچستان سے اغوا کر کے اپنے ساتھ  لے گئے تھے جو تا حال چار سالوں سے لاپتہ ہے اور اسکی زندگی کو شدید خطرات  لاحق ہیں۔ انسانی حقوق کے ادارے امان اللہ زہری کے اغوا کی نوٹس لیکر  بازیابی میں کردار ادا کر کے اس کے خاندان والوں کو کرب و تکلیف سے نجات  دلائیں۔

کوہ گراں تھے ہم"

Image
کوہ گراں تھے ہم"

کیوبا کے انقلابی رہنما اور سابق صدر فیڈل کاسترو کے بارے میں انتہائی متضاد آرا پائی جاتی ہیں۔ بہت سے لوگ ان پر جان چھڑکتے تھے جبکہ انہیں جابر ڈکٹیٹر سمجھنے والوں کی تعداد بھی کم نہیں۔ کاسترو کے چاہنے والے انہیں اپنا نجات دہندہ اور مثالی رہنما قرار دیتے ہیں جبکہ مخالفین کی نظر میں وہ انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے مرتکب ایک ظالم حکمران تھے۔سیاسی میدان سے ہٹ کر دیکھا جائے تو فیڈل کاسترو نے اپنے ملک کو صحت، تعلیم، ثقافت اور کھیلوں کے حوالے سے اعلیٰ مقام پر پہنچایا۔کاسترو نے 1959 میں کمیونسٹ انقلاب کی قیادت کرتے ہوئے امریکا نواز حکومت کا تختہ الٹا اور 2006 تک 47 برس ملک پر حکمران رہے۔ ان کی قیادت میں تمام عرصہ یہ چھوٹا سا ملک عالمی توجہ کا مرکز بنا رہا۔کاسترو کا تعلق مشرقی کیوبا کے ایک خوشحال زمیندار گھرانے سے تھا۔ ان کے والد حملہ آور ہسپانوی فوج کے ساتھ کیوبا آئے تھے۔ کاسترو نے نجی کیتھولک سکولوں میں تعلیم پائی اور بعدازاں ہوانا کی یونیورسٹی سے قانون میں ڈاکٹریٹ کی ڈگری لی۔ حصول تعلیم کے بعد وہ کئی سال وکیل کے طور پر بھی کام کرتے رہے۔سیاست ان کا جنون تھا…

History Will Absolve Me Fidel Castro

Image
History Will Absolve Me Fidel CastroSpoken: 1953
Publisher: Editorial de Ciencias Sociales, La Habana, Cuba. 1975
Translated: Pedro Álvarez Tabío & Andrew Paul Booth (who rechecked the translation with the Spanish La historia me absolverá, same publisher, in 1981)
Transcription/Markup: Andrew Paul Booth/Brian Baggins
Online Version: 1997, Castro Internet Archive (marxists.org) 2001 HONORABLE JUDGES: Never has a lawyer had to practice his profession under such difficult conditions; never has such a number of overwhelming irregularities been committed against an accused man. In this case, counsel and defendant are one and the same. As attorney he has not even been able to take a look at the indictment. As accused, for the past seventy-six days he has been locked away in solitary confinement, held totally and absolutely incommunicado, in violation of every human and legal right. He who speaks to you hates vanity with all his being, nor are his temperament or frame of mind i…